منگل28رمضان المبارک 1442ھ 11؍مئی2021ء

ہمارا لانگ مارچ بھی ہوگا اور دھرنا بھی ہوگا، رانا ثنااللّٰہ

مسلم لیگ ن کے رہنما رانا ثنا اللّٰہ کا لانگ مارچ سے متعلق کہنا ہے کہ ان کا علاج لانگ مارچ ہے، انشااللّٰہ لانگ مارچ ہوگا، 26 مارچ کا لانگ مارچ عید کے بعد ہوگا، ہمارا لانگ مارچ بھی ہوگا اور دھرنا بھی ہوگا۔

سابق وزیر قانون پنجاب رانا ثنا اللّٰہ نے جاتی اُمراء آمد پر میڈیا سے گفتگو کے دوران اپنے بیان میں کہا ہے کہ لانگ مارچ عید کے بعد تک ملتوی ہوا اس کو ختم نہیں کیا گیا، ہماری تحریک حق اور سچ کے لیے ضرور کامیاب ہوگی، پی ڈی ایم تحریک کو دس پارٹیاں چلائیں نو چلائیں یا تین چلائیں یہ کامیاب ہوگی۔

جمعیت علمائے اسلام (ف) اور پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے سربراہ مولانا فضل الرحمٰن جاتی امرا پہنچ گئے جہاں مسلم لیگ نون کے رہنماؤں نے اُن کا استقبال کیا۔

رانا ثنااللّٰہ کا کہنا تھا کہ عید الفطر کے بعد ترجمانوں اور گالی گلوچ بریگیڈ کی اچھل کود ختم ہونے والی ہے، اگر میری ذاتی رائے لی جائے تو دھرنا 126 دن کا ریکارڈ توڑ کر127 دن ہونا چاہئے، انشااللّٰہ لانگ مارچ ضرور ہوگا ان کا علاج ہی لانگ مارچ ہے، ان کے سر پر بیٹھنا ہوگا، لانگ مارچ استعفوں کے ساتھ ہوتا ہے یا اس کے بغیر پی ڈی ایم اس کا فیصلہ کرے گی۔

اُن کا کہنا تھا کہ مولانا فضل الرحمٰن نے کہا تھا ن لیگ اور مریم نواز سے ملاقات کرنا چاہتے ہیں، پچھلے دنوں فضل الرحمٰن کی زرداری اور نوازشریف سے بات ہوئی ہے، مولانا فضل الرحمٰن درمیانی راستہ نکالنا چاہتے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ جس نے نام پر مہر لگانے کا کہا کہ اس پر بھی تحقیقات ہونی چاہیے،  یہ غلطی ہے یا سازش ہے پیپلزپارٹی تحقیقات کروائے، یہ پی ڈی ایم اور پیپلزپارٹی کے لیے بہتر ہوگا، میری ذاتی رائے ہے یہ غلطی سے بڑی چیز ہے۔

جمعیت علمائے اسلام (ف) اور پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے سربراہ مولانا فضل الرحمٰن آج پاکستان مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز سےجاتی امراء رائیونڈ میں ملاقات کریں گے۔

رانا ثناءاللّٰہ کا مزید کہنا ہے کہ زرداری کی میٹنگ کی خبر جس نےدی اس نے پی ڈی ایم اور پیپلزپارٹی کو نقصان پہنچایا۔

اس دوران صحافی کی جانب سے رانا ثناءاللّٰہ سے سوال پوچھا گیا کہ عمران خان کو کوروناوائرس ہوگیا جس پر رانا ثنااللّٰہ کا کہنا تھا کہ نہ میں عمران خان کو کچھ کہنا چاہتا ہوں اور نہ ہی کورونا وائرس کو، عمران خان کی بیماری پر کوئی بات نہیں کرنا چاہتا۔

بشکریہ جنگ
You might also like

Comments are closed.