جمعہ20؍ رجب المرجب 1442ھ 5؍مارچ2021ء

ڈونلڈ ٹرمپ کا مواخذہ: امریکی سینیٹ نے سابق صدر ٹرمپ کو الزامات سے بری کر دیا

ڈونلڈ ٹرمپ کا مواخذہ: امریکی سینیٹ نے سابق صدر ٹرمپ کو کیپیٹل ہل میں ہنگامہ آرائی اور ہجوم کو اشتعال دلانے کے الزامات سے بری کر دیا

ٹرمپ مواخذہ

،تصویر کا کیپشن

امریکی ایوان نمائندگان میں سات ریبپلکن سینٹرز سمیت 57 سینیٹرز نے انھیں سزا دینے کے حق میں ووٹ دیا جبکہ 43 سینیٹرز نے اس کے خلاف ووٹ ڈالا

سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ چھ جنوری کو کیپٹل ہل پر ہنگامہ آرائی اور ہجوم کو بغاوت پر اکسانے کے الزام پر مواخذے کے مقدمے سے بری ہو گئے ہیں۔

امریکی سینیٹ ان پر الزامات ثابت کرنے اور ان کے خلاف مواخذے کی کارروائی کرنے میں دو تہائی اکثریت حاصل کرنے میں ناکام رہی ہے۔

امریکی ایوان نمائندگان میں سات ریبپلکن سینٹرز سمیت 57 سینیٹرز نے انھیں سزا دینے کے حق میں ووٹ دیا جبکہ 43 سینیٹرز نے اس کے خلاف ووٹ ڈالا۔ صدر ٹرمپ کو سزا دلوانے کے لیے کل 67 ووٹوں کی ضرورت تھی تاہم دس ووٹوں کی کمی سے انھیں الزامات سے بری کر دیا گیا ہے۔

اپنی بریت کے بعد، سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایک بیان جاری کرتے ہوئے اس مقدمے کی مذمت کی اور کہا کہ ‘ یہ تاریخ کی سب سے بڑی الزام تراشی ہے۔’

واضح رہے کہ یہ ڈونلڈ ٹرمپ کے خلاف مواخذے کا دوسرا مقدمہ تھا۔ اگر انھیں سزا مل جاتی تو امریکی سینیٹ انھیں دوبارہ صدارتی انتخاب لڑنے سے روکنے کے لیے ووٹ دے سکتی تھی۔

یہ بھی پڑھیے

سابق صدر ٹرمپ

ٹرمپ کے خلاف مواخذے کے مقدمے کی کارروائی میں ووٹنگ کے عمل کے بعد کانگریس میں ریپبلکن کے سنیئر رکن سینیٹر مچ میک کونل کا کہنا تھا کہ ‘مسٹر ٹرمپ کیپیٹل پر حملے کے لیے ‘ذمہ دار’ تھے۔’ انھوں نے اسے ایک’شرمناک اور رسوائی والی پامالی’ قرار دیا ۔

اس سے قبل انھوں نے ان کی سزا کے خلاف یہ کہتے ہوئے ووٹ دیا تھا کہ یہ غیر آئینی ہے اور ٹرمپ اب صدر نہیں رہے ہیں۔ میک کونل صدر ٹرمپ کے 20 جنوری کو عہدہ چھوڑنے کے تک ان کے مقدمے کی سماعت میں تاخیر کرنے میں معاون تھے۔ تاہم انھوں نے خبردار کیا تھا کہ ٹرمپ کو تاحال عدالت میں قصور وار ٹھہرایا جا سکتا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘ وہ ابھی بھی کسی چیز سے بچے نہیں ہیں، ہمارے ملک میں انصاف و عدالت کا نظام موجود ہے۔ ہماری ملک میں دیوانی مقدمات کا نظام ہے اور سابقہ صدور اس میں سے کسی کے لیے جوابدہ ہونے سے مستثیٰ نہیں ہیں۔’

سنیچر کو کیا ہوا؟

ٹرمپ مواخذہ

اپنے اختتامی بیانات میں، ڈیموکریٹک ایوان نمائندگان کے سینیٹ کے ذریعہ اس عمل کی نگرانی کے لیے مقرر قانون سازوں نے متنبہ کیا ہے کہ مسٹر ٹرمپ کو بری کردینا خطرناک ہوگا۔

نمائندہ جو نیگوس کا کہنا تھا کہ ‘ اس سے زیادہ خراب صورتحال نہیں ہو سکتی کیونکہ سخت اور تلخ حقیقت یہ ہے کہ چھ جنوری کو جو ہوا وہ دوبارہ بھی ہوسکتا ہے۔’

نمائندے میڈیلین ڈین نے کہا ،’تاریخ نے ہمیں ڈھونڈ لیا ہے۔ میں پوچھتا ہوں کہ آپ دوسری طرح سے کیوں نہیں دیکھتے ہیں۔’

تاہم ، مسٹر ٹرمپ کے وکیل مائیکل وین ڈیر وین نے مواخذے کی کارروائی کو ‘شو ٹرائل’ قرار دیا اور کہا کہ ڈیموکریٹس مسٹر ٹرمپ کا مواخذہ کرنے کے لیے’جنونی’ تھے۔

انھوں نے کہا کہ ‘یہ مواخذہ شروع سے آخر تک ایک فضول ڈرامہ رہا ہے۔یہ سارا تماشہ حزب اختلاف کی پارٹیکی طرف سے مسٹر ٹرمپ کے خلاف دیرینہ سیاسی انتقامی جدوجہد کے سوا کچھ نہیں رہا۔’

مسٹر ٹرمپ نے خود کہا کہ ‘کوئی بھی صدر اس سے پہلے کبھی اس سے نہیں گزرا’ اور یہ کہ ‘امریکہ کو دوبارہ عظیم بنانے کی تحریک ابھی شروع ہوئی ہے۔’

شمالی امریکہ کے نامہ نگار انتھونی زورچر کا تجزیہ

جو بائیڈن

جو بائیڈن کے لیے اس کا کیا مطلب ہے؟

سادہ الفاظ میں یہ سابق صدر کی فتح ہے۔ اگر وہ چاہیں تو وہ اب بھی 2024 کے صدارتی انتخاب میں حصہ لینے کے اہل ہیں۔ تمام تر وجوہات کے باوجود ان کی سیاسی بنیاد اب بھی بڑے پیمانے پر برقرار ہے۔ دونوں ایوان نمائندگان اور سینیٹ میں، بیشتر ریپبلکن عہدیداروں نے ان کے خلاف مواخذے کی کارروائی کی مخالفت کی۔

جن لوگوں نے اپنی جماعت کا موقف چھوڑا وہ پہلے ہی شدید تنقید کا سامنا کر رہے ہیں اور کچھ واقعات میں انھیں ریپبلکنز کی طرف سے باضابطہ طور پر ملامت کیا گیا ہے۔

تاہم ، ٹرمپ اس مواخذے کے مقدمے کی گرفت سے ابھی باہر نہیں آئے۔ پراسیکیوشن کیس کا سب سے یادگار حصہ ،ٹرمپ کے حامیوں کی وہ نئی ویڈیوز تھیں، جن میں وہ ‘ میک امریکہ گریٹ اگین’ کی نعروں والی ٹوپیاں پہن کر اور ٹرمپ کے جھنڈے لہراتے ہوئے کیپیٹل پر حملہ آور ہوئے تھے۔

وہ تصاویر ہمیشہ کے لیے ٹرمپ کے ساتھ وابستہ رہیں گی۔ یہاں سے ہر ریلی کا انعقاد اس ہنگامہ آرائی کی یادوں کو جنم دے گا۔ ہوسکتا ہے کہ اسے ریپبلکن رینک اور فائل میں شامل نہ کریں، لیکن آزاد رائے دہندگان اور اعتدال پسند اس کبھی فراموش نہیں کر سکے گے۔

سابق صدر کے مواخذے کے مقدمے سے نمٹنے کے لیے موجودہ صدر جو بائیڈن کی حکمت عملی پوری کارروائی کو قریب سے دیکھنا تھی۔

وائٹ ہاؤس حکام کا کہنا تھا کہ وہ اس پر گہری نظر نہیں رکھے ہوئے تھے، مقدمے کی سماعت کے دوران انھوں نے کورونا کی وبا کے حوالے سے اجلاسوں میں اپنی مصروفیات جاری رکھی۔

بائیڈن انتظامیہ کا حساب کتاب یہ ہے کہ اس کی طویل المدتی سیاسی کامیابی کا دارومدار وبائی بیماری، معیشت اور امریکی عوام کے دیگر خدشات سے نمٹنے میں ہے، نہ کہ ٹرمپ کے مواخذے کے مقدمے کے نتائج سے کامیابی ہو گی۔

آخر میں اس مقدمہ کا موجودہ صدر کے اپنے قانونی ایجنڈے کو نافذ کرنے کے پر بہت کم عملی اثر پڑا، سینیٹ کے صرف تین دن ضائع ہوئے۔

اس مقدمے کی سماعت کے اختتام کے ساتھ ہی سینیٹ بائیڈن انتظامیہ کی تقرریوں کی تصدیق ایک بار پھر ایک ہفتہ کی رخصت سے واپس آنے کے بعد کرے گی۔

یہ سب کچھ بائیڈن اور ان کی ٹیم کے لیے خوش آئند ہے۔

اگر ڈیموکریٹک بنیاد یہ فیصلہ کرتی ہے کہ ، بائیڈن کے سیاسی ایجنڈے کے ساتھ آگے بڑھنے کی قیمت ٹرمپ کو مکمل طور پر جوابدہ ٹھہرانا میں ناکامی تھی، اس کے باوجود وہ سیاسی قیمت ادا کرسکتے ہیں۔

مستقبل کی سیاسی لڑائیوں میں، بائیڈن کو متحدہ ڈیموکریٹک پارٹی کی ضرورت ہے۔ اگر اس مواخذے کے مقدمے کی سماعت کے بعد دوسرا اندازہ لگایا جائے تو، دراڑیں سامنے آنا شروع ہو سکتی ہیں۔

امریکی سینیٹ نے گواہوں کو کیوں نہیں سنا؟

امریکی سینیٹ

سینیٹرز نے ابتدا میں ذاتی گواہی کے حق میں ووٹ دیا تھا، جس سے سنیچر کو ممکنہ فیصلے میں تاخیر ہو سکتی تھی۔ لیکن کسی بھی قسم کی تاخیر سے بچنے کے لیے ہنگامی مشاورت کے بعد انھوں نے اپنے فیصلے کو تبدیل کر کے صرف تحریری بیانات داخل کروانے کا کہا۔

فیصلے میں یہ تبدیلی سابق امریکی صدر اور ایک اعلیٰ ریپبلکن عہدیدار کیون میک کارتھی کے درمیان ہنگامہ آرائی کے دوران ہونے والی فون کال پر مباحثے کے بعد ہوا۔

امریکی ایوان نمائندگان کی ایک ریپبلکن رکن، جیم ہیریرا بیوٹلر کا کہنا تھا کہ مسٹر میک کارتھی نے اس دن انھیں اس فون کال کے بارے میں بتایا تھا۔

انھوں نے کہا کہ مسٹر میک کارتھی نے سابق صدر ٹرمپ کو ہنگامہ آرائی کرنے والوں کو روکنے کی التجا کی تھی ، لیکن صدر نے غلط طور پر بائیں بازو کے کارکنوں کو مورد الزام ٹھہرایا ہے جنھیں ‘اینٹیفا’ کہا جاتا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘مسٹر میک کارتھی نے اس کی تردید کی اور صدر کو بتایا کہ یہ ٹرمپ کے حامی ہیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ‘ میک کارتھی کے مطابق اس وقت ہی صدر (ٹرمپ) نے کہا: ‘ٹھیک ہے ، کیون ، میرا خیال ہے کہ یہ لوگ آپ کی نسبت انتخابات سے زیادہ پریشان ہیں۔’

اس کی بجائے ، کانگریسی خاتون رکن کے بیان کو تحریری ثبوت کے طور پر جمع کیا گیا۔

BBCUrdu.com بشکریہ
You might also like

Comments are closed.