’مہاجر بچوں کو سرحد پر ہی مارڈالو‘

’مہاجر بچوں کو سرحد پر ہی مارڈالو‘

June 23, 2018 - 04:00
Posted in:

سوشل میڈیا پر مہاجر بچوں کو سرحد پر قتل کرنے کے الفاظ استعمال کئے جانےپرامریکی خاتون کو نوکری سے معطل کرکے رخصت پر بھیج دیا گیا ہے۔ اوریگن ڈپارٹمنٹ آف ٹراسپورٹیشن (او ڈوٹ) کی ملازمہ ’لوری میک ایلن‘ نامی خاتون نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ فیس بک پر لکھا تھا کہ ’میرا ذاتی خیال ہے کہ انہیں ان تمام کو سرحد پر ہی گولی مار دینی چاہئے اور اس عمل کو اچھا کہنا چاہئے، اس سے ہم محنتی امریکیوں کے ٹیکسوں میں کروڑوں ڈالرز بچیں گے‘۔ میک ایلن کے غیر انسانی اظہار خیال پر فوری ردعمل سامنے آیا اور ہزاروں افراد نے خاتون کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا ، سیکڑوں ناراض افراد نے خاتون کے خلاف اس کے ادارے سے رابطہ کرکے اسے نوکری سے نکالنے کا مطالبہ کیا۔ میک ایلن تنقید برداشت نہ کرسکی اور اپنے تمام سماجی رابطے کے اکاؤنٹس بند کردئیے۔ بعد ازاں اوڈوٹ نے اعلان کیا کہ ایجنسی اس معاملے کی تحقیقات کر رہی ہے اور خاتون ملازمہ کو مزید نوٹس تک کیلئے معطل کردیا گیا ہے۔ بشکریہ جنگbody {direction:rtl;} a {display:none;}