چیتے کی بائیسکل کی سواری

چیتے کی بائیسکل کی سواری

April 11, 2018 - 22:09
Posted in:

گھنے جنگلوں میں بہتی ہوئی ندی کے درمیان میں ایک چیتا کھڑا تھا جسے بغیر کسی پنجرے کے پکڑنے کیلئے پانچ شکاری اس کی آنکھ میں آنکھ ڈالے ساکت کھڑے تھے۔ سب کی سانسیں رُکی ہوئی تھیں۔اس وقت ہر ایک کی جان حلق میں اٹک گئی جب چیتے نے جنگل میں بھاگنے کے بجائے ان کی طرف بڑھنا شروع کیا۔ چیتے اور شکاریوں کے درمیان فاصلہ کم رہا تھا۔ اب یخ بستہ تھا۔ دیا شنکر ٹیواری کی اس سے قبل گزشتہ چوبیس برسوں میں اس طرح کے خطرناک جنگلی جانوروں سے کئی مرتبہ مُڈھ بھیڑ ہو چکی تھی مگر یہ اس کی زندگی کا سب زیادہ خطرناک آمنا سانا تھا۔ دیا شنکر انڈیا-نیپال کی سرحد کے قریب ریاست اتر پردیش کے ضلع مہاراج گنج کے سوگی بروا وائیلڈ ڈویژن میں ایک رینجرز ہے۔ جب چیتا ہمارے نزدیک آ پہنچاآٹھ اپریل اتوار کے دن جب وہ دوپہر دو بجے جنگل میں ڈیوٹی پر مامور تھا، اس کے ایک ساتھی شیام دھر پانڈے نے اسے اطلاع دی کہ گھنے جنگلوں میں ایک چیتا نازُک حالت میں پڑا ہوا ہے۔ کیونکہ چند روز قبل چیتوں کا ایک گروہ جنگل میں دیکھا گیا تھا اس لیے دیا شنکر فوراً اس جگہ پہنچا جہاں اُسے چیتے کے ملنے کی اطلاع ملی تھی۔ چیتا گھنے جنگل میں بہتی ہوئی ندی کے بیچ و بیچ موجود تھا۔ وہ وہاں بار بار کھڑا ہونے کی کوشش کررہا تھا مگر ہر بار ناکام ہوجاتا تھا۔ اس کی اس کیفیت سے صاف ظاہر ہورہا تھا کہ یا تو وہ زخمی تھا یا بہت بیمار تھا۔ دیا شنکر اور اس کے ساتھیوں نے فوراً اس چیتے کی مدد کرنے کی کوششیں شروع کردیں۔ دیا شنکر کا کہنا ہے کہ "جب ہم نے اُسے آواز دی اور اشارہ دیا کہ وہ ہماری طرف آئے، تو وہ ہماری جانب چلنے لگا۔ جب وہ ہماری طرف بڑھا تو ہم بہت خوف زدہ ہوئے، لیکن ہمارے ساتھیوں نے اس کے اردگرد ایک گھیرا بنا لیا۔""جب وہ آہستہ آہستہ ہماری طرف بڑھا تو شیام دھرپانڈے اور ڈی پی کُشوا نے اُس کے پیچھے سے اس پر جست لگائی اور چیتے کو اُس کی پچھلی ٹانگوں سے پکڑ لیا۔ یہ واقعی ایک خطرناک کوشش تھی، لیکن اُس وقت چیتے کی مدد کا اور کوئی رستہ نہیں تھا۔

ڈویژنل فارسٹ آفیسر منیش سنگھ کا کہنا تھا کہ ڈاکٹروں کا اندازہ ہے کہ چیتے پر شاید جنگلی سؤروں یا کسی بڑے جانور نے حملہ کردیا تھا۔ اس کے جسم پر دانتوں اور پنجوں کے نشانات ملے تھے۔ کیونکہ یہ چیتا صرف ڈیڑھ برس کا تھا اس لیے وہ ان جانوروں سے لڑتے ہوئے جلد ہی تھک گیا تھا۔ چیتے کو گلوکوز لگائی گئی اور وہ بہتر حالت میں تھا۔ منیش سنگھ نے اپنے عملے کی تعریف کرتے ہوئے کہا "یہ ایک بہت ہی منفرد اور پُرخطر مہم تھی، انھوں نے اپنی ذمہ داری ادا کرنے کی ایک اعلیٰ مثال قائم کی۔"دوسری جانب، دیا شنکر اور اس کے ساتھی اس بات پر خوش ہیں کہ ان کی وجہ سے ایک چیتا بچ گیا جو اب پنجرے میں چہل قدمی کررہا تھا۔ اُس نے بتایا کہ انھوں نے "دو برس قبل بھی ایک چیتے کو بچایا تھا جو اس وقت بانسوں میں پھنس گیا تھا۔ اس وقت وہ بے بس تھا جبکہ ہمارے پاس ایک جنگلا تھا۔ لیکن اس مرتبہ اس چیتے کو ہم ایک ننھے سے بچے کی طرح گود میں اٹھا کر لے کر گئے۔" "ننھا" کہتے ہوئے شیام دھر مسکرایا "پچاس کلو وزنی ننھا، اُس کا پنجا ہتھوڑے کی طرح لگتا تھا!"کُشوا، ورندرا اور مبین علی، جو اس مہم میں شامل تھے، ان کیلئے یہ واقعہ ناقابل فراموش ہے۔ کُشوا نے کہا کہ اُسے کئی دوستوں نے کہا کہ چیتے کی سائیکل سواری کی ویڈیو بنا لیتے تو بہت مزا آتا۔ لیکن حقیقت یہ ہے کہ اُس وقت ذہن میں صرف ایک ہی خیال تھا کہ کسی طرح اس کی زندگی بچ جائے۔ اس کے علاوہ کچھ خیال ہی نہیں تھا!"چیتا جلد ہی جنگل لوٹ جائے گا جہاں شاید وہ اپنے ساتھیوں کو اپنی سائیکل سواری کی کہانی سنائے اور یہ بھی بتائے کہ انسان ہر وقت برا نہیں ہوتا ہے۔"

BBCUrdu.com بشکریہbody {direction:rtl;} a {display:none;}