پشاور حملے کے شہدا ءمختلف علاقوں میں سپردِ خاک

پشاور حملے کے شہدا ءمختلف علاقوں میں سپردِ خاک

December 02, 2017 - 10:20
Posted in:

پشاورمیں ڈائریکٹوریٹ زراعت پر دہشت گردوں کے حملے میں شہید ہونے والے 9افراد کو خیبر پختون خوا کے مختلف علاقوں میں سپرد خاک کردیا گیا۔
شہداء میں سے کوئی بہن بھائیوں میں سب سے چھوٹا اور لاڈلہ تو کوئی 5بہنوں کا اکلوتا بھائی تھا۔
پشاور میں زرعی ڈائریکٹوریٹ میں دہشت گردی کا شکار ہونے والے 20 سالہ طالب علم امین جان کا تعلق بنوں کی تحصیل ڈومیل کے گاؤں غنی خیل سے تھا۔
امین 6بہن بھائیوں میں سب سے چھوٹا اور لاڈلہ تھا، سیکنڈ ایئر کے طالب علم کی موت کی خبر جب اس کے گھروالوں کو پہنچی تو ان پر قیامت ٹوٹ پڑی،امین جان کو آبائی قبرستان میں سپرد خاک کردیا گیا۔
حملے میں شہید قاسم علی شاہ نے ڈی وی ایم ڈگری حاصل کی تھی اور 5 دسمبر کو اس کا انٹرویو تھا۔
شہید کی نماز جنازہ ڈیرا اسماعیل خان کے علاقے درہ زندہ میں ادا کی گئی، جنازے میں پاک آرمی کے افسران، اسسٹنٹ پولٹیکل ایجنٹ اور لوگوں کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔
ضلع اپر کوہستان کے علاقے داسو کے انتہائی غریب خاندان سے تعلق رکھنے والے22سالہ نوجوان عبدالصادق کی 7ماہ قبل ہی شادی ہوئی تھی۔
وہ 17ماہ سے ایگریکلچر فیلڈ اسسٹنٹ کی ٹریننگ کر رہا تھا، شہید کی نماز جنازہ چائنا چوک داسو میں ادا کی گئی اور ڈی سی کالونی کے قبرستان میں اسے سپرد خاک کر دیا گیا۔
مانسہرہ کی تحصیل اوگی سے تعلق رکھنے والا21سالہ نوجوان محمد بلال ایک استاد کا فرزند اورزرعی یونیورسٹی میں تھرڈ ایئر کا طالبعلم تھا۔
بلال کی نماز جنازہ اوگی کے علاقے بیلیاں میں ادا کی گئی اور آبائی قبرستان میں تدفین کردی گئی۔
پانچ بہنوں کا اکلوتا بھائی شہید محمد وسیم فرسٹ سیمسٹر کا طالب علم تھا جسے گزشتہ روز آبائی گاؤں منی خیل درہ اورکزئی ایجنسی سپرد خاک کردیا گیا۔

googletag.cmd.push(function() { googletag.display('div-gpt-ad-rectangle_belowpost_btf'); });

بشکریہ جنگbody {direction:rtl;} a {display:none;}