پاکستان کے’ 40 فیصد علاقوں میں اب بھی گھنٹوں بجلی بند‘

پاکستان کے’ 40 فیصد علاقوں میں اب بھی گھنٹوں بجلی بند‘

March 28, 2018 - 10:55
Posted in:

پاکستان میں موسم گرم ہوتے ہی بجلی کی لوڈشیڈنگ کا معاملہ ایک مرتبہ پھر خبروں میں ہے۔ حکومت کی جانب سے زیرو لوڈشیڈنگ کے دعوؤں کے برعکس سرکاری دستاویزات کے مطابق ملک میں اب بھی کئی علاقوں کو 16 گھنٹے تک لوڈ شیڈنگ برداشت کرنا پڑ رہی ہے۔گو کہ حکومت میں آنے کے ساڑھے چار سال بعد حکمران جماعت نے ملک کے زیادہ تر علاقوں میں 'زیرو لوڈشیڈنگ' کا اعلان کیا تھا لیکن اب بھی 39 فیصد فیڈر ایسے ہیں جہاں کم سے کم دو اور زیادہ سے زیادہ 16 گھنٹے تک لوڈشیڈنگ ہو رہی ہے۔یہ بھی پڑھیےکیا حکومت توانائی کے اہداف حاصل کر پائی ہے؟’بجلی بچانے کا کہتا رہا مگر کسی نے لفٹ نہ کرائی‘حکومت کا موقف ہے کہ جن فیڈرز پر بجلی کی چوری دس فیصد سے کم ہو گی وہاں بجلی نہیں جائے گی اور بی بی سی کو ملنے والی سرکاری دستاویزات کے مطابق ملک میں بجلی سپلائی کرنے والے 8600 فیڈرز میں سے اس وقت 5297 فیڈرز پر لوڈ شیڈنگ نہیں ہو رہی ہے۔ اس کا مطلب یہ ہوا کہ ملک کے 60 فیصد بجلی کے صارفین کو لوڈشیڈنگ کا سامنا نہیں ہے لیکن 40 فیصد صارفین کو کم سے کم دو اور زیادہ سے زیادہ 16 گھنٹے تک بجلی کی لوڈ شیڈنگ برداشت کرنا پڑ رہی ہے۔
@-webkit-keyframes spinnerRotate
{
from{-webkit-transform:rotate(0deg);}
to{-webkit-transform:rotate(360deg);}
}
@-moz-keyframes spinnerRotate
{
from{-moz-transform:rotate(0deg);}
to{-moz-transform:rotate(360deg);}
}
@-ms-keyframes spinnerRotate
{
from{-ms-transform:rotate(0deg);}
to{-ms-transform:rotate(360deg);}
}
.bbc-news-visual-journalism-loading-spinner {
display: block;
margin: 10px auto;
width: 33px;
height: 33px;
max-width: 33px;

-webkit-animation-name: spinnerRotate;
-webkit-animation-duration: 5s;
-webkit-animation-iteration-count: infinite;
-webkit-animation-timing-function: linear;
-moz-animation-name: spinnerRotate;
-moz-animation-duration: 5s;
-moz-animation-iteration-count: infinite;
-moz-animation-timing-function: linear;
-ms-animation-name: spinnerRotate;
-ms-animation-duration: 5s;
-ms-animation-iteration-count: infinite;
-ms-animation-timing-function: linear;

background-image: url('data:image/gif;base64,R0lGODlhIQAhALMAAMPDw/Dw8BAQECAgIICAgHBwcKCgoDAwMFBQULCwsGBgYEBAQODg4JCQkAAAAP///yH/C1hNUCBEYXRhWE1QPD94cGFja2V0IGJlZ2luPSLvu78iIGlkPSJXNU0wTXBDZWhpSHpyZVN6TlRjemtjOWQiPz4gPHg6eG1wbWV0YSB4bWxuczp4PSJhZG9iZTpuczptZXRhLyIgeDp4bXB0az0iQWRvYmUgWE1QIENvcmUgNS4zLWMwMTEgNjYuMTQ1NjYxLCAyMDEyLzAyLzA2LTE0OjU2OjI3ICAgICAgICAiPiA8cmRmOlJERiB4bWxuczpyZGY9Imh0dHA6Ly93d3cudzMub3JnLzE5OTkvMDIvMjItcmRmLXN5bnRheC1ucyMiPiA8cmRmOkRlc2NyaXB0aW9uIHJkZjphYm91dD0iIiB4bWxuczp4bXA9Imh0dHA6Ly9ucy5hZG9iZS5jb20veGFwLzEuMC8iIHhtbG5zOnhtcE1NPSJodHRwOi8vbnMuYWRvYmUuY29tL3hhcC8xLjAvbW0vIiB4bWxuczpzdFJlZj0iaHR0cDovL25zLmFkb2JlLmNvbS94YXAvMS4wL3NUeXBlL1Jlc291cmNlUmVmIyIgeG1wOkNyZWF0b3JUb29sPSJBZG9iZSBQaG90b3Nob3AgQ1M2IChNYWNpbnRvc2gpIiB4bXBNTTpJbnN0YW5jZUlEPSJ4bXAuaWlkOjFFOTcwNTgzMDlCMjExRTQ4MDU3RThBRkIxMjYyOEYyIiB4bXBNTTpEb2N1bWVudElEPSJ4bXAuZGlkOjFFOTcwNTg0MDlCMjExRTQ4MDU3RThBRkIxMjYyOEYyIj4gPHhtcE1NOkRlcml2ZWRGcm9tIHN0UmVmOmluc3RhbmNlSUQ9InhtcC5paWQ6MUU5NzA1ODEwOUIyMTFFNDgwNTdFOEFGQjEyNjI4RjIiIHN0UmVmOmRvY3VtZW50SUQ9InhtcC5kaWQ6MUU5NzA1ODIwOUIyMTFFNDgwNTdFOEFGQjEyNjI4RjIiLz4gPC9yZGY6RGVzY3JpcHRpb24+IDwvcmRmOlJERj4gPC94OnhtcG1ldGE+IDw/eHBhY2tldCBlbmQ9InIiPz4B//79/Pv6+fj39vX08/Lx8O/u7ezr6uno5+bl5OPi4eDf3t3c29rZ2NfW1dTT0tHQz87NzMvKycjHxsXEw8LBwL++vby7urm4t7a1tLOysbCvrq2sq6qpqKempaSjoqGgn56dnJuamZiXlpWUk5KRkI+OjYyLiomIh4aFhIOCgYB/fn18e3p5eHd2dXRzcnFwb25tbGtqaWhnZmVkY2JhYF9eXVxbWllYV1ZVVFNSUVBPTk1MS0pJSEdGRURDQkFAPz49PDs6OTg3NjU0MzIxMC8uLSwrKikoJyYlJCMiISAfHh0cGxoZGBcWFRQTEhEQDw4NDAsKCQgHBgUEAwIBAAAh+QQAAAAAACwAAAAAIQAhAAAE0vDJSScguOrNE3IgyI0bMIQoqUoF6q5jcLigsCzwJrtCAeSjDwoRAI4aLoNxxBCglEtJoFGUKFCEqCRxKkidoIP20aoVDaifFvB8XEGDseQEUjzoDq+87IijEnIPCSlpgWwhDIVyhyKKY4wOD3+BgyF3IXpjfHFvfYF4dmghalGQSgFgDmJaM2ZWWFEEKHYSTW1AojUMFEi3K7kgDRpCIUQkAcQgCDqtIT2kFgWpYVUaOzQ2NwvTIQfVHHw04iCZKibjNAPQMB7oDgiAixjzBOsbEQA7');
}

Click to see content: Loadshedding_free_feeders_pakistan_urdu

زیادہ لوڈشیڈنگ والے علاقےحکومت کا کہنا ہے کہ ملک میں تقریباً 39 فیصد یعینی 3303 فیڈرز پر لوڈشیڈنگ ہو رہی ہے اور ان فیڈرز پر لوڈ شیڈنگ کا دورانیہ دو سے 16 گھنٹے تک ہے۔ دستاویز کے مطابق 1541 فیڈرز اب بھی روزانہ کم سے کم دو اور زیادہ سے زیادہ چھ گھنٹے بجلی نہیں ہوتی ہے جبکہ 811 فیڈرز پر زیادہ سے زیادہ آٹھ گھنٹے کی لوڈ شیڈنگ ہو رہی ہے۔حکومت کے ترتیب دیے گئے لوڈ مینجمنٹ پلان کے تحت مختلف ڈسٹری بیوشن کمپنیوں کے 580 فیڈرز ایسے ہیں جہاں 10 گھنٹے تک بجلی نہیں ہوتی ہے۔ ملک بھر میں 301 فیڈرز اب بھی ایسے ہیں جہاں روزانہ 12 سے 16 گھنٹے تک بجلی کی فراہمی معطل رہتی ہے۔زیرو لوڈشیڈنگ والے علاقےحکومت کا کہنا ہے کہ ملک میں بجلی کی وافر پیدوار کے سبب 61 فیصد فیڈرز پر لوڈشیڈنگ نہیں ہو رہی۔دستاویز کے مطابق ملک میں زیرو لوڈ شیڈنگ قرار دیے گئے 5297 فیڈرز میں سے سب سے زیادہ لاہور میں ہیں اور لاہور الیکٹراک سپلائی کارپوریشن کے 1227 فیڈرز کو لوڈ شیڈنگ سے مستشنیٰ قرار دیا گیا ہے۔ گوجرانوالہ الیکٹراک سپلائی کاریوریشن گیپکو کے 748 فیڈرز پر لوڈ شیڈنگ نہیں ہو گی۔فیصل آباد الیکٹرک سپلائی کارپوریشن کے 896 فیڈرز پر لوڈ شیڈنگ نہیں ہو گی۔ ملتان الیکٹرک سپلائی کارپوریشن یعینی میپکو کے769 فیڈرز کو لوڈ شیڈنگ سے مستثنیٰ قرار دیا گیا ہے۔
@-webkit-keyframes spinnerRotate
{
from{-webkit-transform:rotate(0deg);}
to{-webkit-transform:rotate(360deg);}
}
@-moz-keyframes spinnerRotate
{
from{-moz-transform:rotate(0deg);}
to{-moz-transform:rotate(360deg);}
}
@-ms-keyframes spinnerRotate
{
from{-ms-transform:rotate(0deg);}
to{-ms-transform:rotate(360deg);}
}
.bbc-news-visual-journalism-loading-spinner {
display: block;
margin: 10px auto;
width: 33px;
height: 33px;
max-width: 33px;

-webkit-animation-name: spinnerRotate;
-webkit-animation-duration: 5s;
-webkit-animation-iteration-count: infinite;
-webkit-animation-timing-function: linear;
-moz-animation-name: spinnerRotate;
-moz-animation-duration: 5s;
-moz-animation-iteration-count: infinite;
-moz-animation-timing-function: linear;
-ms-animation-name: spinnerRotate;
-ms-animation-duration: 5s;
-ms-animation-iteration-count: infinite;
-ms-animation-timing-function: linear;

background-image: url('data:image/gif;base64,R0lGODlhIQAhALMAAMPDw/Dw8BAQECAgIICAgHBwcKCgoDAwMFBQULCwsGBgYEBAQODg4JCQkAAAAP///yH/C1hNUCBEYXRhWE1QPD94cGFja2V0IGJlZ2luPSLvu78iIGlkPSJXNU0wTXBDZWhpSHpyZVN6TlRjemtjOWQiPz4gPHg6eG1wbWV0YSB4bWxuczp4PSJhZG9iZTpuczptZXRhLyIgeDp4bXB0az0iQWRvYmUgWE1QIENvcmUgNS4zLWMwMTEgNjYuMTQ1NjYxLCAyMDEyLzAyLzA2LTE0OjU2OjI3ICAgICAgICAiPiA8cmRmOlJERiB4bWxuczpyZGY9Imh0dHA6Ly93d3cudzMub3JnLzE5OTkvMDIvMjItcmRmLXN5bnRheC1ucyMiPiA8cmRmOkRlc2NyaXB0aW9uIHJkZjphYm91dD0iIiB4bWxuczp4bXA9Imh0dHA6Ly9ucy5hZG9iZS5jb20veGFwLzEuMC8iIHhtbG5zOnhtcE1NPSJodHRwOi8vbnMuYWRvYmUuY29tL3hhcC8xLjAvbW0vIiB4bWxuczpzdFJlZj0iaHR0cDovL25zLmFkb2JlLmNvbS94YXAvMS4wL3NUeXBlL1Jlc291cmNlUmVmIyIgeG1wOkNyZWF0b3JUb29sPSJBZG9iZSBQaG90b3Nob3AgQ1M2IChNYWNpbnRvc2gpIiB4bXBNTTpJbnN0YW5jZUlEPSJ4bXAuaWlkOjFFOTcwNTgzMDlCMjExRTQ4MDU3RThBRkIxMjYyOEYyIiB4bXBNTTpEb2N1bWVudElEPSJ4bXAuZGlkOjFFOTcwNTg0MDlCMjExRTQ4MDU3RThBRkIxMjYyOEYyIj4gPHhtcE1NOkRlcml2ZWRGcm9tIHN0UmVmOmluc3RhbmNlSUQ9InhtcC5paWQ6MUU5NzA1ODEwOUIyMTFFNDgwNTdFOEFGQjEyNjI4RjIiIHN0UmVmOmRvY3VtZW50SUQ9InhtcC5kaWQ6MUU5NzA1ODIwOUIyMTFFNDgwNTdFOEFGQjEyNjI4RjIiLz4gPC9yZGY6RGVzY3JpcHRpb24+IDwvcmRmOlJERj4gPC94OnhtcG1ldGE+IDw/eHBhY2tldCBlbmQ9InIiPz4B//79/Pv6+fj39vX08/Lx8O/u7ezr6uno5+bl5OPi4eDf3t3c29rZ2NfW1dTT0tHQz87NzMvKycjHxsXEw8LBwL++vby7urm4t7a1tLOysbCvrq2sq6qpqKempaSjoqGgn56dnJuamZiXlpWUk5KRkI+OjYyLiomIh4aFhIOCgYB/fn18e3p5eHd2dXRzcnFwb25tbGtqaWhnZmVkY2JhYF9eXVxbWllYV1ZVVFNSUVBPTk1MS0pJSEdGRURDQkFAPz49PDs6OTg3NjU0MzIxMC8uLSwrKikoJyYlJCMiISAfHh0cGxoZGBcWFRQTEhEQDw4NDAsKCQgHBgUEAwIBAAAh+QQAAAAAACwAAAAAIQAhAAAE0vDJSScguOrNE3IgyI0bMIQoqUoF6q5jcLigsCzwJrtCAeSjDwoRAI4aLoNxxBCglEtJoFGUKFCEqCRxKkidoIP20aoVDaifFvB8XEGDseQEUjzoDq+87IijEnIPCSlpgWwhDIVyhyKKY4wOD3+BgyF3IXpjfHFvfYF4dmghalGQSgFgDmJaM2ZWWFEEKHYSTW1AojUMFEi3K7kgDRpCIUQkAcQgCDqtIT2kFgWpYVUaOzQ2NwvTIQfVHHw04iCZKibjNAPQMB7oDgiAixjzBOsbEQA7');
}

Click to see content: Loadshedding

وفاقی دارالحکومت اسلام آباد الیکٹرک سپلائی کارپوریشن یعنی آئیسکو کے 710 فیڈرز پر لوڈشیڈنگ نہیں ہو رہی۔ خیبرپختونخوا کے پورے صوبے کو بجلی فراہم کرنے والی کمپنی پشاور الیکٹراک سپلائی کارپویشن کے صرف 309 فیڈرز پر لوڈ شیڈنگ نہیں ہو رہی۔اندرون سندھ میں میرپورخاص، حیدر آباد، تھر پارکر سمیت بیشتر زیریں سندھ کو بجلی فراہم کرنے والی کمپنی حیدر آباد الیکٹرک سپلائی کارپوریشن حیسکو کے صرف 204 فیڈرز پر لوڈشیڈنگ نہیں ہو رہی۔ بلوچستان کو بجلی فراہم کرنے والے کمپنی کوئٹہ الیکٹرک سپلائی کارپوریشن کوئٹہ کے صرف 61 فیڈرز لوڈ شیڈنگ فری قرار دیا گیا ہے۔سب سے کم لوڈ شیڈنگ سے مستثنیٰ فیڈرز سکھر الیکٹراک سپلائی کارپوریشن سیپکو کے ہیں،جس کے صرف 24 فیڈرز پر لوڈ شیڈنگ نہیں ہو گی۔ سیپسکو سکھر، لاڑ کانہ، شکار پور، نوشہرو فیروز ،گھوٹکی اور جیک آباد کے علاقوں میں بجلی فراہم کرتا ہے۔

BBCUrdu.com بشکریہbody {direction:rtl;} a {display:none;}