نوبیل انعام جوہری ہتھیاروں کے خلاف ادارے کے نام

نوبیل انعام جوہری ہتھیاروں کے خلاف ادارے کے نام

October 06, 2017 - 19:34
Posted in:

اس سال کا نوبیل امن انعام ایٹمی ہتھیاروں کے خاتمے کے لیے مہم چلانے والے ادارے آئی کین (انٹرنیشنل کیمپین ٹو ابولش نیوکلیئر ویپنز) کو دیا گیا ہے۔نوبیل کمیٹی کی سربراہ بیرٹ رائس اینڈرسن نے انعام کے فاتح کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ اس تنظیم نے ایٹمی ہتھیاروں میں تخفیف کے لیے زبردست خدمات انجام دی ہیں۔'ہم ایک ایسی دنیا میں رہ رہے ہیں جہاں ایٹمی ہتھیاروں کے استعمال کا خطرہ اس قدر زیادہ ہے جتنا ایک طویل عرصے تک نہیں تھا۔'انھوں نے شمالی کوریا کی مثال دی۔ جولائی میں آئی کین کے دباؤ کے تحت 122 ملکوں نے اقوامِ متحدہ کے پیش کردہ ایک معاہدے پر دستخط کیے جس کا مقصد بالآخر تمام ایٹمی ہتھیاروں کو ختم کرنا ہے۔ تاہم امریکہ اور برطانیہ سمیت نو معلوم ایٹمی طاقتوں نے اس معاہدے کی توثیق نہیں کی۔
@-webkit-keyframes spinnerRotate
{
from{-webkit-transform:rotate(0deg);}
to{-webkit-transform:rotate(360deg);}
}
@-moz-keyframes spinnerRotate
{
from{-moz-transform:rotate(0deg);}
to{-moz-transform:rotate(360deg);}
}
@-ms-keyframes spinnerRotate
{
from{-ms-transform:rotate(0deg);}
to{-ms-transform:rotate(360deg);}
}
.bbc-news-visual-journalism-loading-spinner {
display: block;
margin: 10px auto;
width: 33px;
height: 33px;
max-width: 33px;

-webkit-animation-name: spinnerRotate;
-webkit-animation-duration: 5s;
-webkit-animation-iteration-count: infinite;
-webkit-animation-timing-function: linear;
-moz-animation-name: spinnerRotate;
-moz-animation-duration: 5s;
-moz-animation-iteration-count: infinite;
-moz-animation-timing-function: linear;
-ms-animation-name: spinnerRotate;
-ms-animation-duration: 5s;
-ms-animation-iteration-count: infinite;
-ms-animation-timing-function: linear;

background-image: url('data:image/gif;base64,R0lGODlhIQAhALMAAMPDw/Dw8BAQECAgIICAgHBwcKCgoDAwMFBQULCwsGBgYEBAQODg4JCQkAAAAP///yH/C1hNUCBEYXRhWE1QPD94cGFja2V0IGJlZ2luPSLvu78iIGlkPSJXNU0wTXBDZWhpSHpyZVN6TlRjemtjOWQiPz4gPHg6eG1wbWV0YSB4bWxuczp4PSJhZG9iZTpuczptZXRhLyIgeDp4bXB0az0iQWRvYmUgWE1QIENvcmUgNS4zLWMwMTEgNjYuMTQ1NjYxLCAyMDEyLzAyLzA2LTE0OjU2OjI3ICAgICAgICAiPiA8cmRmOlJERiB4bWxuczpyZGY9Imh0dHA6Ly93d3cudzMub3JnLzE5OTkvMDIvMjItcmRmLXN5bnRheC1ucyMiPiA8cmRmOkRlc2NyaXB0aW9uIHJkZjphYm91dD0iIiB4bWxuczp4bXA9Imh0dHA6Ly9ucy5hZG9iZS5jb20veGFwLzEuMC8iIHhtbG5zOnhtcE1NPSJodHRwOi8vbnMuYWRvYmUuY29tL3hhcC8xLjAvbW0vIiB4bWxuczpzdFJlZj0iaHR0cDovL25zLmFkb2JlLmNvbS94YXAvMS4wL3NUeXBlL1Jlc291cmNlUmVmIyIgeG1wOkNyZWF0b3JUb29sPSJBZG9iZSBQaG90b3Nob3AgQ1M2IChNYWNpbnRvc2gpIiB4bXBNTTpJbnN0YW5jZUlEPSJ4bXAuaWlkOjFFOTcwNTgzMDlCMjExRTQ4MDU3RThBRkIxMjYyOEYyIiB4bXBNTTpEb2N1bWVudElEPSJ4bXAuZGlkOjFFOTcwNTg0MDlCMjExRTQ4MDU3RThBRkIxMjYyOEYyIj4gPHhtcE1NOkRlcml2ZWRGcm9tIHN0UmVmOmluc3RhbmNlSUQ9InhtcC5paWQ6MUU5NzA1ODEwOUIyMTFFNDgwNTdFOEFGQjEyNjI4RjIiIHN0UmVmOmRvY3VtZW50SUQ9InhtcC5kaWQ6MUU5NzA1ODIwOUIyMTFFNDgwNTdFOEFGQjEyNjI4RjIiLz4gPC9yZGY6RGVzY3JpcHRpb24+IDwvcmRmOlJERj4gPC94OnhtcG1ldGE+IDw/eHBhY2tldCBlbmQ9InIiPz4B//79/Pv6+fj39vX08/Lx8O/u7ezr6uno5+bl5OPi4eDf3t3c29rZ2NfW1dTT0tHQz87NzMvKycjHxsXEw8LBwL++vby7urm4t7a1tLOysbCvrq2sq6qpqKempaSjoqGgn56dnJuamZiXlpWUk5KRkI+OjYyLiomIh4aFhIOCgYB/fn18e3p5eHd2dXRzcnFwb25tbGtqaWhnZmVkY2JhYF9eXVxbWllYV1ZVVFNSUVBPTk1MS0pJSEdGRURDQkFAPz49PDs6OTg3NjU0MzIxMC8uLSwrKikoJyYlJCMiISAfHh0cGxoZGBcWFRQTEhEQDw4NDAsKCQgHBgUEAwIBAAAh+QQAAAAAACwAAAAAIQAhAAAE0vDJSScguOrNE3IgyI0bMIQoqUoF6q5jcLigsCzwJrtCAeSjDwoRAI4aLoNxxBCglEtJoFGUKFCEqCRxKkidoIP20aoVDaifFvB8XEGDseQEUjzoDq+87IijEnIPCSlpgWwhDIVyhyKKY4wOD3+BgyF3IXpjfHFvfYF4dmghalGQSgFgDmJaM2ZWWFEEKHYSTW1AojUMFEi3K7kgDRpCIUQkAcQgCDqtIT2kFgWpYVUaOzQ2NwvTIQfVHHw04iCZKibjNAPQMB7oDgiAixjzBOsbEQA7');
}

Click to see content: nuclear_arsenal_ws_languages_urdu

رائس اینڈرسن نے ایٹمی طاقتوں سے مطالبہ کیا کہ وہ ایٹمی ہتھیاروں کے بتدریج خاتمے کے لیے ابتدائی مذاکرات شروع کریں۔ آئی کین سینکڑوں غیر سرکاری تنظیموں کا مجموعہ ہے۔ یہ تنظیم دس سال قبل قائم ہوئی تھی اور اس کا صدر دفتر سوئٹزرلینڈ کے شہر جنیوا میں ہے۔ اس تنظیم کو بطورِ انعام 90 لاکھ سویڈش کرونا (11 لاکھ ڈالر) ملیں گے۔ تنظیم کی ایگزیکٹیو ڈائریکٹر بیئیٹرس فن نے نامہ نگاروں کو بتایا کہ انعام ان کے لیے حیران کن تھا، ’تاہم یہ اس بات کی بڑی علامت ہے کہ اس کے کام کی ضرورت ہے اور اس کی قدر کی جاتی ہے۔‘ انھوں نے کہا: 'جنگی قانون کہتا ہے کہ ہم عام شہریوں کو نشانہ نہیں بنا سکتے۔ ایٹمی ہتھیاروں کا مقصد عام شہریوں کو نشانہ بنانا ہے، ان کا مقصد تمام شہر کو نیست و نابود کر دینا ہوتا ہے۔۔۔ یہ ناقابلِ قبول ہے، اور اب ایٹمی ہتھیاروں کا کوئی بہانہ نہیں چلے گا۔'انھوں نے کہا کہ ایٹم بم 'ایک بہت بڑا تابکار بم ہوتا ہے، جو افراتفری اور تباہی پھیلاتا ہے اور عام شہریوں کی ہلاکتوں کا سبب بنتا ہے۔ اسے جنگی قانون کے تحت استعمال نہیں کیا جا سکتا۔'

نوبیل کمیٹی کے بیان میں کہا گیا ہے کہ 'بعض ملک اپنا ایٹمی اسلحہ جدید تر بنا رہے ہیں، اور اس بات کا حقیقی خطرہ موجود ہے کہ مزید ملک بھی ایٹمی ہتھیار حاصل کرنے کی کوشش کریں گے، جس کی مثال شمالی کوریا ہے۔'یاد رہے کہ حالیہ مہینوں میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور شمالی کوریا کے سربراہ کم جونگ ان ایک دوسرے کو شدید دھمکیاں دیتے رہے ہیں۔ صدر ٹرمپ دھمکی دے چکے ہیں کہ وہ شمالی کوریا کو مکمل طور پر تباہ کر دیں گے۔

BBCUrdu.com بشکریہbody {direction:rtl;} a {display:none;}