نواز شریف کے دو ریفرنس میں قابل ضماتت وارنٹ گرفتاری جاری

نواز شریف کے دو ریفرنس میں قابل ضماتت وارنٹ گرفتاری جاری

October 26, 2017 - 09:01
Posted in:

اسلام آباد کی احتساب عدالت نے عزیزیہ ملز اورفلیگ شپ انوسٹمنٹ ریفرنس میں نواز شریف کے قابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کرتے ہوئے 3نومبر کو عدالت میں پیش ہونے کا حکم دیا ہے۔
سماعت کے آغاز پر ڈپٹی پراسیکیوٹر جنرل نیب کا کہنا تھا کہ عدالت 15دن کے لیےحاضری سےاستثنیٰ دےچکی جو 24اکتوبرکوختم ہوچکا،انہوں نے کہا کہ عدالت نے پندرہ دن کا وقت دیا،اب ملزم کو یہاں ہونا چاہیے تھا۔
جج نے ہدایت کی کہ آپ تبصرہ نہ کریں، صرف قانونی بات کریں۔
نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث کا کہنا تھا کہ نواز شریف پر فرد جرم عائد ہو چکی ہے، حاضری سے استثنا دیا جائے۔
اس موقع پر کلثوم نواز کی میڈیکل رپورٹ بھی عدالت میں پیش کی گئی۔خواجہ حارث نے بتایا کہ کلثوم نواز کی میڈیکل رپورٹ کل بذریعہ ای میل موصول ہوئی۔
نیب نے نواز شریف کی استثنا کی درخواست کی مخالفت کردی۔
عدالت نے فریقین کے دلائل سننے کے بعد فیصلہ محفوظ کرلیا۔
اس سابق وزیراعظم نواز شریف کی صاحبزادی مریم نواز اور داماد کیپٹن (ر) محمد صفدرنیب ریفرنسز کی سماعت کے لیے احتساب عدالت میں پیش ہوئے۔
اس موقع پر سیکورٹی کےانتہائی سخت اقدامات کئے گئے ہیں اور 400 اہلکار جوڈیشل کمپلیکس کے اطراف تعینات ہیں۔
اسلام آباد کی احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نیب کی جانب سے دائر تین ریفرنسز کی سماعت کررہے ہیں۔عدالت نے3ریفرنسزمیں استغاثہ کے2 گواہوں کوطلبی کےسمن جاری کررکھےہیں۔
احتساب عدالت میں ملزمان کےوکلااور15نیب پراسیکیوٹرزکوداخلےکی اجازت ہے۔
سابق وزیراعظم نواز شریف سعودی میں ہونے کی وجہ سے آج پیش نہیں ہوئے جب کہ مریم نوازجاتی امرا سے خصوصی طیارے کے ذریعے اسلام آباد پہنچی ہیں۔
نوازشریف کو15روزکے لیےحاضری سے استثنا دیا گیا تھا جو 24 اکتوبر کو ختم ہوگیا۔
ذرائع کے مطابق نوازشریف کےپیش نہ ہونےپرحاضری سے استثنا کی درخواست دائرکی جائےگی۔سابق وزیراعظم کی جانب سے ان کے نمائندے ظافر خان عدالت کے روبرو پیش ہیں۔
عدالت نےحسین اورحسن نوازکومفرورقراردےکرجائیدادکی تفصیلات طلب کی ہیں،عدالت نے8نومبرتک پیش نہ ہونےپرملزمان کواشتہاری قراردینےکاحکم دےرکھاہے۔
واضح رہے کہ احتساب عدالت نے 19 اکتوبر کو نواز شریف پران کے نمائندے ظافر خان کے ذریعے ایون فیلڈ ریفرنس اور العزیزیہ اسٹیل ملز ریفرنس میں فرد جرم عائد کی تھی، جبکہ مریم نواز اورکیپٹن ریٹائرڈ صفدر پر بھی ایون فیلڈ ریفرنس میں فرد جرم عائد کی گئی تھی۔
نواز شریف کے نمائندے، ان کی صاحبزادی اور داماد تینوں نے فرد جرم میں عائد الزامات کو ماننے سے انکار کردیا تھا۔
20 اکتوبر کوعدالت نے نواز شریف پرفلیگ شپ انوسٹمنٹ ریفرنس میں بھی فرد جرم عائد کی تھی جبکہ ریفرنس میں نامزد دیگر ملزما ن حسن اور حسین نواز کو مفرور قرار دیا تھا۔

googletag.cmd.push(function() { googletag.display('div-gpt-ad-rectangle_belowpost_btf'); });

بشکریہ جنگbody {direction:rtl;} a {display:none;}