قطر پاکستانیوں کو ورک ویزے کیوں نہیں دیتا؟

قطر پاکستانیوں کو ورک ویزے کیوں نہیں دیتا؟

October 12, 2017 - 09:09
Posted in:

قطر میں پاکستانی عرصہ دراز سے قیام پذیر ہیں، سو ان کے روایتی کھانے بھی یہاں میسر ہیں۔ چند ریستوران تو یہاں دہائیوں سے قائم ہیں۔ تاہم ایسے ریستوران بہت کم ہیں جہاں آپ کو کھانوں کی ترکیب اور ذائقہ دونوں خالصتاً پاکستانی ملیں۔ایک ریستوران کے مالکان سے استفسار پر اس کی دو عمومی وجوہات سامنے آئیں۔ ایک تو قطر میں رہنے والے تارکینِ وطن پاکستانیوں کی تعداد اس قدر کم ہے کہ کاروبار چلانے کے لیے صرف ان پر اکتفا نہیں کیا جا سکتا۔ اور دوسرا یہ کہ پاکستان سے باورچی منگوانے کے لیے انھیں ویزے میسر نہیں ہوتے۔ صرف خوراک کا ہی شعبہ نہیں، زیادہ تر شعبہ جات اور صنعتوں میں ملازمت کے غرض سے آنے والے پاکستانیوں کو قطر کا ویزا باآسانی نہیں ملتا۔٭ ’بحران کا 2022 فٹبال ورلڈ کپ پر کوئی منفی اثر نہیں پڑا‘٭ ’تمام دوحہ میرے آرٹ کی نمائش کرتی ایک آرٹ گیلری ہے‘شاید یہی وجہ ہے کہ گذشتہ چند برسوں سے قطر میں مقیم پاکستانیوں کی تعداد محض ایک لاکھ کے قریب رہی ہے، کبھی چند ہزار کم کبھی زیادہ۔ یہ تعداد دیگر ایشیائی ممالک کے مقابلے میں انتہائی کم ہے۔

قطر میں مقیم زیادہ تر پاکستانی قطر کی مسلح افواج، پولیس یا سرکاری نوکریوں سے وابستہ ہیں جس کے بعد ہنر مند افرادی قوت کا زیادہ تناست طب، تعلیم اور انجینیئرنگ کے شعبوں میں ہے جبکہ ایک بڑی تعداد غیر ہنر مند طبقے کی ہے۔ادریس انور کے مطابق قطر میں ہر شعبے کے اندر پاکستانی ہنر مند افراد کی کافی مانگ ہے اور ویزے کے مسائل حل ہونے کے ساتھ ہی قطر میں پاکستانیوں کے لیے کاروبار اور ملازمتوں کے مواقع بڑھ جائیں گے۔غیر ہنر مند افراد کی تربیت کے لیے قطر کے اندر بھی پاکستان ویلفیئر فورم کے نام سے ایک تنظیم قائم کی گئی جو دوحہ میں پاکستان کے سفارتخانے کی نگرانی میں کام کرتی ہے۔ تنظیم کے صدر ریاض بکالی نے بی بی سی کو بتایا کہ اگر پاکستان ویلفیئر فورم نہ ہو تو قطر میں پاکستانی تقریباٌ ایک ہزار ایسے خاندان ہیں جو بنیادی تعلیم، صحت اور قانونی مشاورت کی ضروریات سے محروم ہو جائیں۔ یہ تنظیم مختلف پروگراموں کے ذریعے پاکستانی تارکینِ وطن کے بچوں کی سکول فیس اور دیگر تعلیمی اخراجات برداشت کرنے، غیر ہنر مند افراد کی فنی تربیت کرنے، ان کی فلاح و بہبود اور انہیں درپیش قانونی مشکلات میں ان کی امداد کرتی ہے۔

BBCUrdu.com بشکریہbody {direction:rtl;} a {display:none;}