دھرنا پولیس کمانڈو کو ایک آنکھ کی بینائی سے محروم کر گیا

دھرنا پولیس کمانڈو کو ایک آنکھ کی بینائی سے محروم کر گیا

December 02, 2017 - 06:58
Posted in:

فیض آباد دھر ناپولیس کمانڈو کو ایک آنکھ کی بینائی سے محروم کرگیا۔
پولیس کمانڈو اسرار تنولی ایم فل کا طالب علم اور گھر کا واحد کفیل ہے، جس نے مسلح مظاہرین میں گھرے ایف سی اہلکار کی جان بچائی تھی۔
انتظامیہ نے مکمل علاج کرائے بغیر اسرار تنولی کو پمز سے گاؤں بھیج دیا ، جسے یہ زخم کسی دشمن نہیں، اپنوں ہی بھائیوں نے دیئے ہیں۔پچیس نومبر کو فیض آباد آپریشن کے دوران اینٹی ٹیررسٹ اسکواڈ کے اسرار تنولی نے اپنی جان ہتھیلی پر رکھ کر ایف سی کے ایک تنہا جوان کی جان بچائی جس پر مظاہرین کلہاڑیوں سے حملہ آور تھے۔
ایف سی جوان کو مظاہرین کے نرغے سے چھڑا کر کندھے پر اٹھا کر لے جانے والے اسرار کو اچانک کسی نے ایسا پتھر مارا جو سیدھا اس کی دائیں آنکھ پہ لگا اور پھر سارا منظر سرخی مائل سیاہی میں بدل گیا۔
پنجاب یونیورسٹی سے کیمسٹری میں ماسٹرز کرنے اور قائد اعظم یونیورسٹی میں ایم فل کیمسٹری کے اس طالب علم کی دائیں آنکھ ضائع ہو گئی، حسیں سپنوں سے مزین بہار زندگی کے سارے اجالے، غم و اندوہ کے اندھیاروں میں ڈوب گئے۔
پمز اسپتال میں آپریشن کے بعد اسرار کو قدرے عجلت میں ضلع مانسہرہ، تحصیل اوگی میں اس کے دور دراز گاؤں بھیج دیا گیا، جس کا اسے دکھ ہے۔
اسرار کو جہاں آنکھ ضائع ہونے کا غم ہے وہاں حکومت اور محکمے سے گلہ بھی ہے،گاؤں منتقل ہونے کے بعد آج بھی اس کی زخمی آنکھ سے ناقابل برداشت ٹیسیں اور درد اٹھ رہاہے، گھر کےآس پاس کوئی اسپتال ہے نہ کلینک۔
بیمار والدین اور چار بہن بھائیوں کے واحد کفیل اسرار تنولی کا گھر اور کمرہ کسی گلشن غم کا عکاس ہے، خاندان کے سہمے بزرگ و بچے پریشاں ہیں کہ اب اس گھرانے کا کیا ہوگا۔

googletag.cmd.push(function() { googletag.display('div-gpt-ad-rectangle_belowpost_btf'); });

بشکریہ جنگbody {direction:rtl;} a {display:none;}