دس سالہ معمہ: بینظیر بھٹو کا قاتل کون؟

دس سالہ معمہ: بینظیر بھٹو کا قاتل کون؟

December 27, 2017 - 08:37
Posted in:

بینظیر بھٹو مسلم دنیا کی پہلی خاتون تھیں جنھیں کسی ملک کی سربراہی کا موقع ملا۔ مگر دسمبر 2007 میں قاتلانہ حملے میں ہلاک ہوجانے کے بعد اگلے دس سالوں میں یہ زیادہ بہتر طریقے سے سمجھ آیا کہ پاکستان کا نظام کیسے کام کرتا ہے بجائے یہ معلوم ہونے کے کہ ملک کی پہلی خاتون وزیر اعظم کو قتل کرنے کا حکم کس نے دیا تھا۔27 دسمبر 2007 میں بینظیر بھٹو کو 15 سالہ بلال نے خود کش دھماکے کی مدد سے قتل کر دیا۔ اس وقت بینظیر بھٹو راولپنڈی کے لیاقت باغ میں انتخابی ریلی سے خطاب کر کے واپس جا رہی تھیں جب بلال ان کی گاڑی کے قریب گیا، پہلے انھیں گولی ماری اور پھر اس کے بعد خود کو اڑا لیا۔ بلال نے یہ حملہ پاکستانی طالبان کے حکم کے مطابق کیا۔ بینظیر بھٹو قتل کیس کے بارے میں جاننے کے لیے مزید پڑھیےبینظیر قتل کیس میں بری پانچ افراد نامعلوم مقام پر منتقلبینظیر قتل: کیا دوسرا بمبار زندہ ہے؟بینظیر بھٹو کے قتل سے متعلق اہم سوالاتبینظیر بھٹو قتل: پانچ ملزمان بری، مشرف اشتہاری، پولیس افسران کو سزابینظیر بھٹو پاکستان کے پہلے جمہوری وزیر اعظم ذوالفقار علی بھٹو کی بیٹی تھیں۔ ان کے والد کا سیاسی سفر ایک فوجی آمر نے ختم کیا جب 1979 میں جنرل ضیا الحق کے دور حکومت میں انھیں پھانسی پر چڑھا دیا گیا۔ بینظیر بھٹو اس کے بعد دو مرتبہ پاکستان کی وزیر اعظم بنیں لیکن ملک کی فوج نے کبھی بھی ان پر اعتبار نہیں کیا اور کرپشن کے الزامات کی مدد سے انھیں حکومت سے نکال باہر کیا۔ اپنی موت کے وقت بینظیر بھٹو تیسری مرتبہ وزیر اعظم بننے کے لیے انتخابی مہم چلا رہی تھیں۔

اندازہ ہے کہ اکرام اللہ اس وقت مشرقی افغانستان میں مقیم ہے جہاں وہ پاکستانی طالبان کے لیے درمیانے درجے کا کمانڈر بن چکا ہے۔گذشتہ دس سالوں میں اب تک بینظیر بھٹو کے قتل کیس میں صرف دو پولیس اہلکاروں کو سزا ہوئی ہے جنھوں نے جائے قتل کو دھو دینے کا حکم جاری کیا تھا۔ کئی پاکستانی ان کی سزا کو ناانصافی قرار دیتے ہیں اور ان کا موقف ہے کہ پولیس ایسا کام فوج کے کہنے کے بغیر کر ہی نہیں سکتی۔ یہ ایک دفعہ پھر ظاہر کرتا ہے کہ حاضر اور ریٹائرڈ فوجی افسران پر مبنی پاکستان کی اسٹیبلیشمینٹ ایک خفیہ نیٹ ورک ہے جو کہ ملک کے قومی مفاد کو اپنی ذمہ داری سمجھتے ہیں اور اسی کے تحفظ کی خاطر فیصلے کرتے ہیں۔

BBCUrdu.com بشکریہbody {direction:rtl;} a {display:none;}