بلوچستان: شکاری پرندوں کو تحویل میں لے لیا گیا

بلوچستان: شکاری پرندوں کو تحویل میں لے لیا گیا

February 19, 2018 - 02:31
Posted in:

پاکستان کے صوبہ بلوچستان میں محکمۂ جنگلات و جنگلی حیات کے حکام نے ایسے تین شکاری پرندوں کو تحویل میں لے لیا جنھیں متحدہ عرب امارات سے بلوچستان میں تلور کے شکار کے لیے لایا جا رہا تھا۔کوئٹہ میں تین شکاری پرندوں کو تحویل میں لیے جانے کے بعد ایسے پرندوں کی تعداد چھ ہو گئی ہے جن پر عدالتوں میں باقاعدہ مقدمات چل رہے ہیں۔جن تین نئے شکاری پرندوں کو تحویل میں لیا گیا انھیں شارجہ سے ایک پرواز کے ذریعے کوئٹہ لایا جارہا تھا۔ ان پرندوں کو کوئٹہ کے ہوائی اڈے پر اتوار کو تحویل میں لیا گیا۔یہ بھی پڑھیےتلور کے شکار کے بعد قطری شکاریوں کی واپسیتلور کا شکار: پنجگور میں متحدہ عرب امارات کے شاہی خاندان کے قافلے پر فائرنگقطری شاہی خاندان کو تلور کے شکار کے لائسنس کا اجرا لاہور ہائیکورٹ میں چیلنجخیبر پختونخوا: قطری شہزادوں کو تلور کے شکار کی اجازت نہیںتلور کو اب بھگوان ہی بچائے

واضح رہے کہ گذشتہ سال بھی خلیجی ممالک سے لائے جانے والے چار ایسے قیمتی شکاری پرندوں کو تحویل میں لیا گیا تھا جن میں سے ایک مر گیا تھا جبکہ باقی تین پر مقدمات چل رہے ہیں۔عدالتوں سے ان پرندوں کے بارے میں فیصلہ آنے تک محکمۂ جنگلات کو ان پر ایک خطیر رقم خرچ کرنی پڑے گی۔محکمہ جنگلات کے ایک افسر نے بتایا کہ ان پرندوں کو روزانہ کبوتر اور مچھلیاں کھلائی جاتی ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ تین پرندوں پر روزانہ 10 سے 15 ہزار روپے کا خرچہ آتا ہے۔ عرب ممالک سے تعلق رکھنے والے متعدد افراد سردیوں میں تلور کا شکار کرنے کے لیے پاکستان آتے ہیں۔ پاکستان میں قیام کے دوران وہ شکاری پرندوں کے زریعے تلور کا شکار کرتے ہیں جس کی نسل معدوم ہونے کے خطرے سے دوچار ہے۔

BBCUrdu.com بشکریہbody {direction:rtl;} a {display:none;}