اگر دعوت نامہ آتا تو؟

اگر دعوت نامہ آتا تو؟

August 02, 2018 - 13:33
Posted in:

انڈیا میں کس نے سوچا ہوگا کہ کوئی وزیراعظم کبھی یہ سوچ سکتا ہے کہ چلو واپسی میں لاہور ہوتے چلتے ہیں، نواز شریف سے ملاقات بھی ہوجائے گی اور ان کی والدہ کے لیے جو شال خریدی تھی، کافی دن سے رکھی ہے، وہ بھی دیتے آئیں گے۔اس لیے اگر دعوت نامہ آتا ہے اور وہ فوراً قبول کر لیتے ہیں تو زیادہ حیران نہیں ہونا چاہیے۔ اگر قبول نہیں کرتے تو اس کی دو تین وجہ ہو سکتی ہیں۔ سب سے بڑی یہ کہ جب وہ لاہور گئے تھے تو اس کے صرف ایک ہفتے بعد پٹھان کوٹ کی ایئربیس پر حملہ ہوا تھا۔ انڈیا کے مطابق یہ حملہ آور پنجاب کی سرحد پار کرکے ملک میں داخل ہوئے تھے۔اگر وہ پھر جاتے ہیں اور پھر ایسا کچھ ہوجاتا ہے تو پارلیمانی انتخابات سے قبل یہ سیاسی خودکشی سے کم نہیں ہوگا۔کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ یہ ’آئس بریک کرنے‘ یہ باہمی رشتوں کے جمود کو توڑنے کا اچھا موقع ہوگا، اور وزیراعظم کو جانا ہی چاہیے۔ کچھ دوسروں کا خیال ہے کہ یہ ایک سکیورٹی رسک ہوگا، وہاں وزیر اعظم کی سکیورٹی کی ذمہ داری کون لے گا؟بہرحال، اگر دعوت نامہ آتا ہے تو فیصلہ کرنا آسان نہیں ہوگا۔ نریندر مودی پوری دنیا میں گھومے ہیں لیکن جیسا اکثر ہوتا ہے، بات پڑوسی کی دعوت پر ہی آکر اٹکتی ہے!

BBCUrdu.com بشکریہbody {direction:rtl;} a {display:none;}