’پاکستان ٹیررستان ہے‘، اقوامِ متحدہ میں انڈیا کی برہمی

’پاکستان ٹیررستان ہے‘، اقوامِ متحدہ میں انڈیا کی برہمی

September 22, 2017 - 16:18
Posted in:

انڈیا نے پاکستانی وزیراعظم کے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کے جواب میں برہمی کا اظہار کیا ہے اور انڈیا کی سفیر نے پاکستان کو 'ٹیررستان' کہہ کر پکارا۔اپنے خطاب میں پاکستان کے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے انڈیا پر الزام عائد کیا تھا کہ وہ کشمیر میں 'جنگی جرائم' میں ملوث ہے اور پاکستان میں 'دہشت گردی برآمد' کر رہا ہے۔ ’محدود جنگ کی پالیسی پر عملدرآمد غلطی ہو گی‘انڈیا نے سنیچر کو ہی جنرل اسمبلی سے خطاب کر لیا تھا تاہم بعد میں پاکستان کے وزیراعظم کے خطاب پر اس نے اپنا جواب دینے کا حق استعمال کیا۔ یاد رہے کہ حالیہ عرصے میں دونوں جوہری طاقتوں کے درمیان کشمیر کے تنازع پر کشیدگی میں اضافہ ہوا ہے۔دونوں ممالک نے برطانوی راج سے سنہ 1947 میں آزادی حاصل کی تھی تاہم اس کے بعد سے اب تک کل تین جنگوں میں سے دو جنگیں کشمیر کے معاملے پر لڑی جا چکی ہیں۔ اپنی تقریر میں پاکستان کے وزیراعظم نے افغان جنگ پر بھی بات کی اور کہا کہ اس میں پاکستان 'قربانی کا بکرا' نہیں بنے گا۔ امریکہ پاکستانی خفیہ ایجنسیوں پر الزام عائد کرتا ہے کہ ان کے شدت پسندوں سے رابطے ہیں تاہم پاکستان ان الزامات سے انکار کرتا ہے۔ کشمیر کے معاملے پر پاکستان انڈیا پر الزام عائد کرتا ہے کہ وہ دلی کے خلاف احتجاج کرنے والے شہریوں کے خلاف بڑے پیمانے پر بلاامتیاز فوج کا استعمال کر رہا ہے۔ پاکستان کے وزیراعظم نے اپنے خطاب میں کہا کہ 'شاٹ گن سے پیلٹ کے استعمال کی وجہ سے ہزاروں کشمیری اپنی بینائی کھو چکے ہیں۔ ان میں بچے بھی شامل ہیں۔' ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ خطے کی صورتحال کا جائزہ لینے کے لیے اقوام متحدہ کو اپنا خصوصی سفیر مقرر کرنا چاہیے۔ جواب دینے کا حق استعمال کرتے ہوئے اقوام متحدہ میں انڈیا کی سیکریٹری اینعم گھمبھیر نے کہا 'حیرت انگیز بات یہ ہے کہ جس ریاست نے اسامہ بن لادن کو تحفظ دیا اور ملا عمر کو پناہ وہ یہ تاثر دے رہی ہے کہ اصل میں نقصان اسے ہوا ہے۔‘'پاکستان اب ٹیررستان ہے جس کے پاس دنیا میں دہشت گردی پھیلانے کے لیے ایک پھلتی پھولتی صنعت ہے۔'مسلم اکثریت کی ریاست کشمیر میں سنہ 1989 میں انڈین حکومت کے خلاف مسلح جدوجہد کا آغاز ہوا تھا۔ انڈیا پاکستان پر الزام لگاتا ہے کہ وہ اس بدامنی کو بڑھاتا ہے تاہم اسلام آباد ان الزامات کو مسترد کرتا ہے۔ جمعرات کو انڈیا کے زیر انتظام کشمیر میں ہونے والے شدت پسندوں کی جانب سے کیے جانے والے مبینہ حملے میں تین شہری ہلاک اور 20 زخمی ہو گئے تھے۔ پولیس نے میڈیا کو بتایا ہے کہ اس گرنیڈ حملے کا نشانہ ایک مقامی وزیر تھے تاہم وہ بچ کر بھاگ نکلنے میں کامیاب ہوئے۔

BBCUrdu.com بشکریہbody {direction:rtl;} a {display:none;}