کرد ریفرنڈم میں داؤ پر کیا لگا ہے؟

کرد ریفرنڈم میں داؤ پر کیا لگا ہے؟

September 25, 2017 - 19:26
Posted in:

25 ستمبر، عراق میں کردوں کے زیر انتظام علاقوں کے رہائشیوں کے لیے وہ دن ہے جب انھیں مستقبل کے عراقی خطہ کردستان یا کے آر آئی کے بارے میں اپنی رائے دینے کا موقع دیا جا رہا ہے جو عراق کی موجودہ سرحد کے اندر ہی ایک نیم خود مختار علاقہ ہوگا۔ریفرنڈم کے بیلٹ میں پوچھا جا رہا ہے ’کیا آپ چاہتے ہیں کہ خطہ کردستان اور خطے کی انتظامیہ کی حدود سے باہر کردستانی علاقے آزاد ہو جائیں ؟‘ترکی کردوں کے ساتھ امریکی اتحاد قبول نہیں کرے گا: اردوغانجہاں ووٹنگ ہو رہی ہے وہاں اکثریت نسلاً کرد ووٹروں کی ہے جن کی تاریخ ہے کہ وہ اپنے لیے خود مختاری چاہتے ہیں، تو نتیجہ ممکنہ طور پر ’ہاں‘ میں ہی آئے گا۔البتہ اس سے فرق نہیں پڑتا کہ کردوں کے زیر انتظام علاقوں کے رہائشی کیا فیصلہ کرتے ہیں، ریفرنڈم کا فوری طور پر کوئی انتظامی اثر نہیں پڑے گا۔

کوئی عراقی وزیر اعظم اپنی موجودگی میں عراق کو ٹوٹتا ہوا نہیں دیکھ سکتا۔ ترکی اور ایران کو خوف ہے کہ ’ہاں‘ کا ووٹ ان کے ملکوں کی کرد اقلیت کو بھی حوصلہ دے گا۔ایسی باتیں 2003 سے اب تک کی جا رہی ہیں۔ اس سب کا یہ مطلب ہے کہ کیا ریفرنڈم کے بعد کا دن شائد بالکل ویسا ہی ہو جیسا اس سے پہلے والا تھا۔ کردستان کی آزادی کا ریفرنڈم بھی شائد اسی طرح دلچسپ اور زبردست ہو لیکن اسکے بعد آنے والا دن موسم کے مخالف ہوگا۔

BBCUrdu.com بشکریہbody {direction:rtl;} a {display:none;}