ٹیپو سلطان، متعصب جہادی یا روادار حکمران؟

ٹیپو سلطان، متعصب جہادی یا روادار حکمران؟

May 14, 2018 - 16:12
Posted in:

انڈیا میں میسور کے سابق حکمراں ٹیپو سلطان کو ایک بہادر اور محب وطن حکمراں کے طور پرہی نہیں مذہبی رواداری کے علمبردار کے طور پر بھی یاد کیا جاتا ہے۔ لیکن کچھ عرصے سے بی جے پی کے رہنما اور دائیں بازو کے نظریات کے مورخ ٹیپو کو ظالم اور ہندو دشمن مسلم سلطان کے طورپر پیش کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ ٹیپو کو ہندوؤں کا قتل عام کرنے والا حکمراں بتایا جا رہا ہے۔ کرناٹک کے انتخابی مہم کے دوران بھی کئی بار یہ سوال اٹھایا گیا کہ ٹیپو ریاست کا ہیرو ہے یا ہندو دشمن ظالم حکمران؟ٹیپو سلطان میسور سے تقریـباً 15 کلومیٹر دور سری رنگا پٹنم میں ایک خوبصورت مقبرے میں اپنے والد حیدر علی اور والدہ فاطمہ فخرالنسا کے پہلو میں دفن ہیں۔ سری رنگا پٹنم ٹیپو کا دارالسلطنت تھا اور یہاں جگہ جگہ ٹیپو کے دورکے محلات، عمارتیں اور کھنڈرات ہیں۔اسی بارے میں مزید پڑھیےہندو دشمن یا آزادی کا ہیرو؟ٹیپو سلطان ’رام‘ کے نام کی انگوٹھی پہنتے تھے’وحشی قاتل ٹیپو کے پروگرام میں مجھے نہ بلائیں‘ٹیپو پر اس تنازعے کے باوجود ہزاروں لوگ اب بھی ٹیپو کے مقبرے اور ان کے محلات دیکھنے کے لیے سری رنگا پٹنم آتے ہیں۔ لوگوں کے ذہن میں میسور کا ٹیپو اب بھی ایک محب وطن انگریزوں سے لڑتے ہوئے اپنی جان دینے والا ہیرو اور سیکیولرحکمراں ہے۔

پروفیسر علی کہتے ہیں کہ تاریخ کو اس کے عصری سیاسی اور سماجی پس منظر میں معروضیت کے ساتھ سمجھنے کی ضرورت ہوتی ہے۔ملک کی بدلتی ہوئی سیاست میں تاریخ کی نئی تشریح کی جا رہی ہے۔ اس بدلتے ہوئے پس منظر میں کوشش یہی ہے کہ مستقبل کی تاریخ میں ٹیپو سلطان جیسے ماضی کے حکمرانوں کو شاید فراموش کر دیا جائے یا پھر انھیں ہندو دشمن، ظالم حکمراں کے طور پر پیش کیا جائے۔

BBCUrdu.com بشکریہbody {direction:rtl;} a {display:none;}