شہباز شریف کی گرفتاری کیخلاف اپوزیشن نے اپنی اسمبلی لگالی،چیئرمین نیب سے استعفیٰ کا مطالبہ

شہباز شریف کی گرفتاری کیخلاف اپوزیشن نے اپنی اسمبلی لگالی،چیئرمین نیب سے استعفیٰ کا مطالبہ

October 11, 2018 - 23:52
Posted in:

اسلام آباد ( نمائندہ جسارت) قومی اسمبلی کے باہر اپوزیشن کی جانب سے اپنی اسمبلی قائم کر دی گئی۔ اپوزیشن اجلاس میں سردارایاز صادق کواسپیکر قومی اسمبلی کا گاؤن پہنا دیاگیا۔اپوزیشن اجلاس میں خواجہ آصف اور احسن اقبال کی چھٹی کی درخواست منظور کی گئی ۔اس موقع پر سردار یاز صادق نے رولنگ دی کہ ابھی توجہ دلاؤ نوٹس لیتے ہیں جبکہ اپوزیشن ارکان نے نکتہ اعتراض پر بولنے کی کوشش کی ۔اپوزیشن اجلاس میں اپوزیشن لیڈر شہباز شریف کی گرفتاری سے متعلق تحریک پر بحث کرائی گئی اور شہبازشریف کی گرفتاری پراپوزیشن ارکان نے شیم شیم کے نعرے لگائے۔تفصیلات کے مطابقمسلم لیگ (ن) اور پارلیمنٹ میں اپوزیشن جماعتوں کے ارکان نے اسمبلی کے احاطے میں اجلاس کیا‘ پیپلزپارٹی شریک نہیں ہوئی‘سابق اسپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق نے اجلاس کی صدارت کی، سینیٹر راجا ظفر الحق بھی شریک ہوئے۔ دیگر جماعتوں کی جانب سے اے این پی اور جے یو آئی کے سینیٹر اور ارکان اسمبلی میں شریک ہوئے ۔اجلاس میں مسلم لیگ (ن)کے رہنما رانا ثنا اللہ نے شہباز شریف کی گرفتاری کے کیس کی تفصیلات پیش کیں انہوں نے بتایا کہ نیب نے شہباز شریف پر بے بنیاد اور من گھڑت کیس بنایا، آشیانہ اسکیم میں لطیف سنز کو کنٹریکٹ دیا گیا، شہباز شریف نے اس کنٹریکٹ پر انکوائری کمیٹی بنائی، کمیٹی نے بتایا کہ اس کنٹریکٹ میں نقائص ہیں جس پر شہباز شریف نے ٹھیکے کو منسوخ کرکے دوبارہ ٹینڈر کرنے کی ہدایت دی۔رانا ثنا اللہ کا احتجاجی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہنا تھا کہ شہباز شریف پر کرپشن کا کوئی الزام نہیں ہے، پرویز الہی پر 22 ارب روپے کا الزام ہے لیکن انہیں گرفتار نہیں کیا گیا۔انہوں نے کہا کہ عمران خان خود کہتے ہیں کہ پنجاب کا سب سے بڑا ڈاکو پرویز الہی ہے سیاسی انتقام کا سلسلہ بند نہ کیا گیا تو احتجاج پارلیمنٹ سے بھی آگے جائے گا ۔سردار ایاز صادق نے اس کے بعد عثمان کاکڑ کو اظہار خیال کرنے کا موقع دیا تو انہوں نے کہاکہ عام انتخابات اورسینیٹ کے الیکشن میں دھاندلی کی گئی،انہوں نے کہا کہ چیئرمین نیب جسٹس(ر)جاوید اقبال اور چیف الیکشن کمشنر فوری طور پر مستعفی ہوں۔آج کامشترکہ اجلاس بہت اہم ہے، سینیٹ کے الیکشن میں آزادسینیٹرزمنتخب کراکے چیئرمین بنوایاگیا،عام انتخابات سے پہلے باپ پارٹی بنائی گئی۔انہوں نے کہاکہ شہبازشریف کی گرفتاری کاایک پس منظرہے اور ہم ان کی گرفتاری کی مذمت کرتے ہیں انہوں نے کہاکہ اب بھی پارٹیوں کوتوڑنے کاعمل جاری ہے، ڈرادھمکا کرفارورڈبلاک بناناہمیں قبول نہیں ۔انہوں نے کہاکہ اصل مقابلہ جمہوری اور غیرجمہوری قوتوں کے درمیان ہے۔اجلاس سے اظہار خیال کرتے ہوئے ایم ایم اے کی رکن اسمبلی شاہدہ اختر علی نے کہاکہ شہبازشریف قائدحزب اختلاف ہیں اور ان کی گرفتاری کی مذمت کرتے ہیں،اسپیکرقومی اسمبلی اسد قیصر کے رویے پراب سوال اٹھیں گے کیونکہ ہم نے فوری اجلاس بلانے کامطالبہ کیاتھا۔
بشکریہ جسارتbody {direction:rtl;} a {display:none;}