سفارتی جنگ شروع‘ ترکی نے اسرائیلی سفیر کو نکال دیا

سفارتی جنگ شروع‘ ترکی نے اسرائیلی سفیر کو نکال دیا

May 16, 2018 - 23:12
Posted in:

انقرہ (انٹرنیشنل ڈیسک) فلسطین کے علاقے غزہ کی پٹی میں اسرائیلی فوج کی وحشیانہ کارروائیوں میں نہتے فلسطینی مظاہرین کے قتل عام کے بعد ترکی اور اسرائیل کے درمیان سفارتی تعلقات ایک بار پھر کشیدہ ہوگئے ہیں۔ ترکی نے ملک میں متعین اسرائیلی سفیر کو نکال باہر کرنے کے بعد استنبول میں اسرائیلی قونصل جنرل کو بھی ملک چھوڑنے کا حکم دیا ہے۔ ترک صدر رجب طیب اردوان نے کہا تھا کہ اسرائیلی فورسز کے ہاتھوں درجنوں فلسطینیوں کی ہلاکت ’نسل کشی‘ ہے جس پر اسرائیل نے ترکی کے سفیرکے ملک بدری کے احکامات جاری کر دیے۔ اس کے فوری ردعمل میں ترکی نے بھی اسرائیلی سفیر کو ملک سے نکل جانے کا حکم دے دیا۔ ترک صدر نے اسرائیلی وزیراعظم بنیامین نیتن یاہو کو نسل پرست ریاست کا سربراہ قرار دیا اور کہا کہ نیتن یاہو کے ہاتھوں بے گناہ فلسطینیوں کے خون سے رنگین ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ اسلامی تحریک مزاحمت حماس نہیں اصل دہشت گرد اسرائیل اور نیتن یاہو ہے جس نے درجنوں فلسطینی مظاہرین کو بے رحمی کے ساتھ شہید کردیا ہے۔ ترک میڈیا پر اسرائیلی سفیر کی ایک وڈیو جاری کی گئی ہے ، جس میں ملک چھوڑنے سے پہلے ان کی سخت انداز میں تلاشی لی جا رہی ہے۔ اسرائیل نے الزام عائد کرتے ہوئے کہنا تھا کہ وہاں میڈیا کے لوگ پہلے سے ہی موجود تھے اور یہ سب کچھ باقاعدہ منصوبہ بندی کے تحت کیا گیا ہے۔ ترک صدر نے آئندہ جمعے کو اسلامی تعاون کی تنظیم او آئی سی کا ایک ہنگامی اجلاس بھی بلایا ہے ، جس میں دنیا کو غزہ کے حوالے سے ایک اہم پیغام دیا جائے گا۔
بشکریہ جسارتbody {direction:rtl;} a {display:none;}