بچوں کو جنسی تعلیم خاندانی نظام تباہ کرنے کی سازش ہے ،اسد اللہ بھٹو

بچوں کو جنسی تعلیم خاندانی نظام تباہ کرنے کی سازش ہے ،اسد اللہ بھٹو

February 14, 2018 - 21:16
Posted in:

کراچی (اسٹا ف رپورٹر)ہیومن رائٹس نیٹ ورک کے تحت ویلنٹا ئن ڈے کی تباہ کاریوں سے آ گاہی کیلیے ’’سیکس ایجوکیشن ، ویلنٹا ئن ڈے۔ کس کا ایجنڈا ، کس کا فائدہ‘‘ کے عنوان پر فاران کلب میں سیمینار منعقد ہوا۔ جس میں مردو خواتین سمیت بچوں نے شرکت کی۔ ہیومن رائٹس نیٹ ورک کے اعلامیہ کے مطا بق پا کستان میں خاندانی نظام ایک اثاثہ ہے، جس کو تباہ کر نے کی سازش کی جا رہی ہے ۔ جنسی تعلیم مغرب کی ضرورت ہے نہ کہ ہماری ،کیوں کہ مغربی معاشرے میں اولاد والدین کے کنٹرول سے باہر ہے اور خاندانی نظام تباہ ہے۔ سیمینار سے سابق رکن قو می اسمبلی اسد اللہ بھٹو، ای آرڈی سی کے سربراہ سلمان آصف صدیقی ،ہیومن رائٹس نیٹ ورک کے صدر انتخاب عا لم سوری، جنرل سیکرٹری شہزاد مظہر، شمع النسا ودیگر نے خطاب کیا۔ مقررین نے کہا کہ پا کستان میں جنسی تعلیم کی جس حد تک ضرورت ہے اتنی رائج ہے ۔ ہمار ے معا شرے میں جنسی تعلیم دینا اور اس کی نگرانی کر نا ماں اورباپ کی ذمے داری ہے ۔اگر جنسی تعلیم اسکولوں میں رائج ہو گئی تو پھر ایک نیا باب کھل جا ئے گا اور اساتذہ اس مضمون کو پڑھاتے ہوئے اپنی حد سے تجا وز کر نے لگ جائیں گے ۔ بچوں کی حفاظت والدین اور اساتذہ کی نگرانی میں ہی ممکن ہے ۔ جس چیز کو اسلام نے حرام قرار دے دیا ہو آخر اس کومحفوظ کہہ کر کیسے جا ئز قرار دیا جا سکتا ہے ۔ ویلنٹائن ڈے کا مقصد خاندانی نظام کو تباہ کر نا ہے ۔تعلیمی نصاب میں الگ سے جنسی تعلیم فراہم کر نا مسئلے کا حل نہیں ہے بلکہ خود ایک بہت بڑا مسئلہ ہے ۔ مسئلے کا اصل حل تعلیمی حکمت عملی ہے ۔ ا مریکی ریسرچ سینٹر کی ایک رپورٹ کے مطا بق امریکا میں جنسی تشدد کے جو اعداد و شمار سامنے آئے ہیں۔دنیا بھر میں سالانہ ایک لاکھ 70 ہزار بچے سیکس ٹریڈ میں استعمال کیے جاتے ہیں۔یکم جنوری 2018ء سے 20 جنوری 2018ء تک بچوں کے ساتھ جنسی زیادتی کے چند واقعات سامنے آ چکے ہیں،جو کہ قصور، سانگھڑ، مردان اور ٹنڈو آدم میں ہوئے۔ یہ وہ واقعات تھے جو اخبارات اور سوشل میڈیا کے توسط سے منظرعام پر آئے۔
بشکریہ جسارتbody {direction:rtl;} a {display:none;}