آبی حیات پلاسٹک کیوں کھاتی ہے؟

آبی حیات پلاسٹک کیوں کھاتی ہے؟

September 14, 2018 - 08:16
Posted in:

چھوٹی مچھلیوں سے لے کر بڑی وہیلز مچھلیوں تک آبی حیات پلاسٹک کھا رہی ہیں۔اس کی وجہ یہ ہے کہ نہ صرف پلاسٹک خوراک جیسے دکھتی ہے بلکہ اس کی بو بھی خوراک جیسی ہوتی ہے۔رائل نیدرلینڈز انسٹیٹیوٹ فار سی ریسرچ کے مائیکربیئل اکالوجسٹ ایرک زیٹلر کہتے ہیں کہ ’اگلی بار جب بھی آپ ساحل سمندر پر جائیں تو پانی سی پلاسٹک نکال کر اسے سونگھنے کی کوشش کیجیے گا۔‘سمندروں میں پلاسٹک کی آلودگی ’عالمی بحران‘سمندری آلودگی کی بڑی وجہ ٹائروں کا پلاسٹکسمندر کی اتھاہ گہرائیوں میں زہریلے کیمیائی مادے’اس سے مچھلیوں جیسی بو آتی ہے۔‘ایرک زیٹلر کا کہنا ہے کہ ایسا اس لیے ہوتا ہے کیونکہ سمندر میں پلاسٹک جلد ہی مائیکروبز کی باریک طے پر بیٹھ جاتی ہے، عام طور پر اسے ’پلاسٹسفر‘ کہا جاتا ہے۔اس باریک طے سے کیمیکلز نکلتے ہیں جو اسے خوراک جیسا بناتے ہیں اور اس سے خوراک جیسے بو آتی ہے۔ایک خاص مرکب ڈیمیتھل سلفائیڈ (ڈی ایم ایس) کیمیکل کی طرح کام کرتا ہے اور قطار میں پلاسٹک سے نکلتا رہتا ہے اور کہا جاتا ہے کہ جانور جن میں مچھلیاں بھی شامل ہیں اس کی جانب کھچی چلی آتی ہیں۔

ایرک زیٹلر اس حوالے سے سیبرگ کے ساتھ اتفاق کرتے ہیں اور کہتے ہیں کہ ’اس اور کوئی فوری حل نہیں ہے۔‘’ماحول سے پلاسٹک کو ختم کرنے کے لیے کئی چیزوں کو یکجا کرنا پڑے گا، انسانی رویوں میں تبدیلی، حکومتی قوانین اور صنعتوں کی شرکت۔‘

BBCUrdu.com بشکریہbody {direction:rtl;} a {display:none;}